ہچکچا گیا میں خود کو مسلمان کہتے کہتے،

 
 
گونگی ہو گئی ہے آج کچھ زبان کہتے کہتے،
 ہچکچا گیا میں خود کو مسلمان کہتے کہتے،
 
یہ بات نہیں کہ مجھ کو اُس پر یقین نہیں،
بس ڈر گیا خود کو صاحب ایمان کہتے کہتے،
توفیق نہ ہوئی مجھے ایک وقت کی نماز کی،
اور چُپ ہوا موذّن اذان کہتے کہتے،
 
کسی کافر نے جو پوچھا یہ کیا ہے مہینہ؟
شرم سے پانی ہوا میں رمضان کہتے کہتے،
 
میرے شیلف میں گرد سے اٹی کتاب کا جو پوچھا،
میں گڑھ گیا زمین میں قرآن کہتے کہتے،
 
یہ سُن کر چپھ سادھ لی اقبال اُس نے،
یوں لگا جیسے رُک گیا ہو مجھے حیوان کہتے کہتے
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s